خواتین کے حقوق ،استحصال اور معاشرتی تفریق میں بھارت سب سے آگے؛ رپورٹ

آبادی کا 49فیصد حصہ ہونے کے باوجود پارلیمنٹ میں خواتین کی نمائندگی 11فیصد, ملازمت میں 19فیصد اور پولیس میں صرف 7 فیصد ہے

شرح خواندگی میں خواتین اور مَردوں کا فرق20فیصد جبکہ پیشہ وَر خواتین کی تنخواہ مَردوں سے20فیصد کم ہے

2010سے 2022کے دوران پیشہ ور خواتین کی تعداد میں7فیصد گراوٹ ہوئی

2022میں کُل6لاکھ جرائم میں سے71فیصد بھارتی خواتین کے خلاف تھے

2021کی نسبت 2022 میں خواتین کے خلاف جرائم میں15.3فیصد اضافہ ہوا

2018میں بھارت خواتین کے لئے خطرناک ترین ممالک میں سرِ فہرست تھا

بھارتی خواتین کو درپیش مسائل میں جنسی زیادتی، ہراسگی اور کم عمری میں جَبری شادی کے مسائل کا سامنا ہے

2021میں31677زیادتی ،76263اغواء اور30856گھریلو تشدد کے واقعات رپورٹ ہوئے

انڈیا ٹوڈے کی رپورٹ کے مطابق روزانہ سفر کرنے والی خواتین میں سے80فیصد کو جنسی ہراسگی کا سامنا کرنا پڑتا ہے

بھارت میں روزانہ خواتین سے86زیادتی کے واقعات پیش آتے ہیں جن میں سے دہلی 6واقعات کے ساتھ سرِ فہرست ہے

یونیسیف کے مطابق بھارت میں27فیصد لڑکیوں کی شادی18سا ل سے پہلے کر دی جاتی ہے

بھارت میں15فیصد شادی شدہ خواتین کو جہیز کے مطالبات پر طلاق کا بھی سامنا ہے

2017میں7ہزار خواتین کو جہیز نہ دینے پر قتل کر دیا گیا

13فروری2023کو کان پور میں گھر خالی نہ کرنے پر ماں اور بیٹی کو ریاستی اہلکاروں کی جناب سے زندہ جلا دیا گیا

2021میں ماہانہ14تیزاب گردی کے واقعات رونما ہوئے لیکن کسی بھی مجرم کو سزا نہیں ہوئی

2012میں زیر تعلیم 23سالہ ڈاکٹر کو دہلی میں چلتی بس میں اجتماعی زیادتی کے بعد قتل کر دیا گیا تھا

2020میں دلت خاتون کے ساتھ اتر پردیش میں زیادتی اور قتل کا واقع پیش آیا لیکن عدالت نے چاروں مجرمان کو باعز ت بری کر دیا ۔

2014میں جرمن خاتون،2018میں روسی خاتون اور2022میں برطانوی سیاح خاتون کے ساتھ گینگ ریپ کے واقعات بھی پیش آئے

سیاح خواتین کے خلاف جنسی زیادتی کے واقعات کے پیشِ نظر2019میں امریکہ نے اپنے شہریوں کو بھارت سفر کرنے کے خلاف وارننگ بھی جاری کی تھی

خواتین کے خلاف بڑھتے جرائم معاشرتی تفریق اور ہتک آمیز رویہ بھارتی نام نہاد جمہوریت کے منہ پر طمانچہ ہے

Visited 2 times, 1 visit(s) today

You might be interested in