سپاہیانہ رُوح ۔ روایات میں زندہ

تحریر: میجر جنرل ریٹائرڈ مُحمد خلیل ڈار
لاہور میں فلیگ سٹاف ہاؤس میں توڑ پھوڑ، اور اس کے بعد فوجی وردی کی سرعام بے حرمتی نے بہت سے لوگوں کے دل توڑ دیے ہوں گے جنہوں نے وردی کی عزت اور یونیفارم پہن کر اور ملکی پرچم کی حفاظت کے لیے جان دینے پر آمادگی کے لیے فوج میں شمولیت اختیار کی۔ ویڈیوز میں جہاں لوگوں نے ہمارے جنگی ہیروز کی تصویروں کی بے عزتی کی اور چوک میں رکھے ایک پرانے F-6 فائٹر کو جلانا ناقابل برداشت تھا۔ یہ ہمارے قومی فخر کی علامتیں ہیں، جنہیں دیکھ کر نوجوانوں کو حوصلہ ملتا ہے اور بوڑھوں کو تسکین ملتی ہے۔ آخر ہمارے ہی لوگوں کو اس قدر مایوس کیا گیا ہے کہ وہ ان کی بے حرمتی میں ملوث ہیں۔ اس طرح کے واقعات نے پتھر دل لوگوں کو بھی اپنے اندر رونے پر مجبور کر دیا ہو گا، خاص طور پر وہ جو دنیا کی تمام افواج کے لیے آفاقی، سپاہیانہ جذبے سے محبت میں بندھے ہوئے ہیں۔

اللہ کا شکر ہے کہ ہجوم نے پاکستان کے جھنڈے کی بے عزتی نہیں کی جو وہاں عمارت کے اوپر نصب تھا۔ کور کمانڈرز ہاؤس کوئی عام رہائشی کوارٹر نہیں تھا، جس کا تعلق قائد اعظم سے تھا لیکن عسکری طور پر یہ فلیگ اسٹاف ہاؤس تھا۔

اگرچہ وقت بدل گیا ہے، لیکن ماضی میں چند طریقوں کو اپنانا اب بھی سپاہیانہ کے جذبے کی عکاسی کرتا ہے۔ لہٰذا، ماضی کی جیت کی تعریف کرنا آنے والے وقتوں کے لیے انسپائر کرنے کا ذریعہ ہے۔

پہلی جنگ عظیم میں انفنٹری افسران کو رائفلیں نہیں بلکہ پستول اور سیٹیاں جاری کی جاتی تھیں۔ وجہ یہ تھی کہ افسران سے توقع کی جاتی تھی کہ وہ بغیر کسی خوف کے قیادت کریں گے اور خود دشمن پر گولی چلانے میں ملوث نہیں ہوں گے۔ افسران سے توقع کی جاتی تھی کہ وہ سپاہیوں کی حوصلہ افزائی کریں گے کہ وہ دشمن کی گولیوں کا سامنا کرتے ہوئے آگے بڑھتے رہیں اور آخر تک ان کے ساتھ رہیں۔ ڈر کے مارے سپاہیوں کا پیچھے رہ جانا یا چھوڑ دینا سپاہی کی سب سے ذلت آمیز حرکت تھی۔ تعجب کی بات نہیں کہ پہلی جنگ عظیم میں افسروں کی سب سے زیادہ ہلاکتیں ہوئیں۔ جب کوئی افسر کمانڈر کی فوجی وردی پہنتا ہے تو یہ فخر ہوتا ہے۔

اسی طرح کی کی بحری روایت ہے، جس میں جہاز کے کپتان سے جہاز کے ساتھ ڈُوبنے کی توقع کی جاتی ہے۔ یہ غیر فوجی ذہنوں کو عجیب لگ سکتا ہے لیکن یہ ایک مضبوط فوجی احساس کی علامت ہے۔ جو چیز اسے خودکشی سے الگ کرتی ہے وہ یہ ہے کہ کپتان کو جہاز سے نکلنے سے پہلے جہاز میں موجود تمام افراد کے انخلاء کو یقینی بنانا ھوتا ھے ۔

وہ کپتانوں میں سب سے سخت ہو سکتا ہے اور وہ سخت ڈسپلن ہو سکتا ہے، اکثر اس کے کچھ جُونئیر اس سے نفرت کرتے ہیں۔ لیکن جب وقت آتا ہے تو وہ ایک فوجی افسر کی مہربانی میں اپنی جان دینے کو تیار ہو جاتا ہے۔ اس کا فوجی غرور اسی روایت میں پوشیدہ ہے۔ کوئی سچا فوجی کمانڈر اس جرم کے ساتھ زندہ نہیں رہ سکتا کہ اس نے اپنے سپاہیوں یا ملاحوں کو قسمت پر چھوڑ دیا اور اپنی جان بچائی۔ فوج کے کام کرنے کا طریقہ بھی یہی ہے اور یہی وہ چیز ہے جو فوج کو دوسرے کارپوریٹ یا کاروبار سے الگ کرتی ہے۔

دنیا بھر میں کسی بھی سچے سپاہی کا خُون جوش مارتا ھے جب بھی وہ ولیم بارنس وولن کی “44 ویں فٹ کی آخری لڑائی” کی مشہور پینٹنگ کو دیکھتا ہے۔ جس میں لیفٹیننٹ تھامس سوٹر کو دکھایا گیا ہے، جس نے اپنے جسم کے گرد رجمنٹ کا رنگ لپیٹ لیا، اس بات کو یقینی بنایا کہ قومی غرور زمین پر نہ گرے۔ اس نے آخری زندہ بچ جانے والے 20 سپاہیوں کے ساتھ جنوری 1842 میں یقینی موت کا سامنا کیا۔
اس طرح کے واقعات کی ہمیشہ تعریف کی جاتی ہے اور ان واقعات کو قومی نشانوں /علامتوں/میڈلز کا حصہ بنایا جاتا ہے جو فوج میں شامل ھونے کے احساس کو اُبھارتے ہیں جس کا کام اپنے آپ کو وطن پہ شہید ھونے کے لئے پیش کرنا ھے۔ یہ جذبہ اور لگاؤ، آرمی کے اُصول، روایات / قومی نشانات سے جُڑا ھوا ھے، یہ علامات بتاتی ہیں کہ آخری نتیجے کے طور پر مادر وطن کی خاطر شہید ھونا قابل قبول ھے۔

انگریزوں نے ہندوستان میں اپنے مقاصد کو آگے بڑھانے کے لیے مارشل ریس کے خیال کو فروغ دیا۔ پھر بھی مضبوط فوجی روایات سے تعلق اسی طرح جڑا ہوا تھا جیسا کہ دنیا بھر میں کہیں بھی ہے۔ بہت سے لوگوں کی طرف سے جو اب بھی پورے پاکستان میں زندہ ہیں، عزت اور فخر کے ساتھ برطانوی فوج کی کہانیاں سنانا کوئی معمولی بات نہیں ہے۔

ستم ظریفی یہ ہے کہ (غالباً مایوسی کے نتیجے میں) بہت سے سابق فوجی سیاسی جماعتوں کا رخ منتخب کرنے میں الجھن کے آثار دکھا رہے ہیں۔ پہلے سیاست سے بالاتر ھوں، پاک فوج کا قابل فخر حصہ ھونے پر، پہلے موجودہ فوجی کمانڈ چین کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا جائے۔ ایک آواز کا حصہ بنیں، قومی نشانوں کی بے حرمتی کے ذمہ داروں کو کیفر کردار تک پہنچا کر، آنے والے وقتوں کے لیے مثال بنائیں۔

Column

PakArmyZindabad

PakArmy

You might be interested in