ورلڈڈیموکریسی رپورٹ

دنیا کی آبادی کا 72% – 5.7 بلین لوگ – 2022 تک آٹوکریسی  میں زندگی گزار رہے ہیں۔بہت سے خطوں میں جمہوریت خراب ہو چکی ہے۔ ایشیابحرالکاہل میں جمہوریت1978 کی سطح پر آ چکی ہے۔ آرمینیا، یونان اور ماریشس میں جمہوریتیں تیزی سےزوال کا شکار ہیں۔ مشرقی یورپ اور وسطی ایشیا، اور لاطینی امریکہ اور کیریبین،جمہوریت کے حوالے سے سرد جنگ کے خاتمے کے بعد والی سطح پر واپس آ گئے ہیں۔

2. ایک کثرتیت – دنیا کی آبادی کا 44%، یا 3.5 بلین لوگ – electoral democracy میںرہتے ہیں، جس میں ہندوستان، نائیجیریا، پاکستان، روس، فلپائن، اور ترکی شامل ہیں۔بڑی آبادی کے ساتھ بند آمریتوں میں چین، ایران، میانمار اور ویتنام شامل ہیں۔ اسنظام کی قسم دنیا کی آبادی کا 28%، یا 2.2 بلین افراد پر مشتمل ہے۔ نو ممالک میں  جمہوری روایات کے حوالے سے دوگنا  کمی آئی ہے– ان ممالک میں افغانستان، بنگلہدیش، کمبوڈیا، ہانگ کانگ، ہندوستان، انڈونیشیا، میانمار، فلپائن اور تھائی لینڈ شاملہیں– 

ڈس انفارمیشن، پولرائزیشن، اور autocracy ایک دوسرے کو تقویت دیتی ہے۔ جمہوریتروایات اس کے برعکس غلط معلومات کے پھیلاؤ کو کافی حد تک کم کرتے ہیں، اور کچھحد تک پولرائزیشن بھی۔

پچھلے دس سال میں میڈیا سنسر شپ شیادہ ھوئی ہے  پچھلے ایک سال میں 35 ممالک میں اظہار رائے کی آزادی زیادہ کے بجائے کم ھوئی  ہے – 37 ممالک میں سولسوسائٹی کی تنظیموں پر حکومتی جبر بدتر ہو رہا ہے۔ تیس ممالک میں انتخابات کامعیار خراب ہو رہا ہے۔

You might be interested in