گلزار امام کی گرفتاری

تحریر: ایمن خان

بلوچستان کئی سالوں سے دہشت گردی کی لعنت سے نبرد آزما ہے۔ صوبے میں دہشت گرد حملوں کا سلسلہ جاری ہے، خاص طور پر سیکیورٹی فورسز، تنصیبات اور عام شہریوں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔ بلوچستان میں جاری عسکریت پسندی، جس میں بھارت کی مداخلت سمیت مختلف عوامل شامل ہیں، نے انتہا پسند عناصر کے پھلنے پھولنے کے لیے سازگار ماحول پیدا کیا ہے۔. ان چیلنجوں کے جواب میں پاکستانی حکومت نے بلوچستان میں دہشت گردی کے مسئلے سے نمٹنے کے لیے متعدد اقدامات کیے ہیں۔ اس نے عسکریت پسند گروہوں کے خلاف فوجی کارروا,ئیاں شروع کی ہیں، ,سیکیورٹی اقدامات میں اضافہ کیا ہے، اور دہشت گردی کی سرگرمیوں کو ناکام بنانے کے لئے انٹیلی جنس کی صلاحیتوں میں اضافہ کیا ہے.حکومت نے بلوچ قوم پرست تحریک کے اندر اعتدال پسند عناصر کے ساتھ امن مذاکرات شروع کرنے اور مذاکرات اور مصالحت کی اہمیت پر بھی زور دیا ہے۔ بلوچ عوام کی سماجی و اقتصادی شکایات کو دور کرنے اور تعلیم، صحت کی دیکھ بھال اور روزگار کے مواقع تک ان کی رسائی کو بہتر بنانے کے لئے کوششیں کی جا رہی ہیں۔اگرچہ بلوچستان میں دہشت گردی کے خلاف جنگ ایک پیچیدہ اور جاری عمل ہے، لیکن حکومت کی ٹھوس کوششیں خطے میں امن و استحکام کی بحالی کے عزم کو ظاہر کرتی ہیں۔عسکریت پسندی کی لعنت کو ختم کرنے کے لئے ، گلزار امام ، جسے شامبے کے نام سے بھی جانا جاتا ہے ، کی گرفتاری پاکستانی سیکیورٹی فورسز کے لئے ایک اہم کامیابی تھی ، جو کئی سالوں سے ملک میں عسکریت پسندی اور دہشت گردی کے مسئلے سے نبرد آزما ہیں۔ امام صرف ایک عسکریت پسند نہیں تھا۔ وہ ایک اہم ہدف تھا ، اور اس کی گرفتاری بلوچ نیشنل آرمی (بی این اے) کے خلاف ایک بڑی فتح ہے ، جس کی انہوں نے بنیاد رکھی اور قیادت کی۔بی این اے دو دیگر عسکریت پسند گروہوں، بلوچ ریپبلکن آرمی (بی آر اے) اور یونائیٹڈ بلوچ آرمی (یو بی اے) کے انضمام کے بعد تشکیل دیا گیا تھا۔ اپنے قیام کے بعد سے، اس گروہ نے پاکستان بھر میں متعدد دہشت گرد حملے کیے ہیں، جن میں قانون نافذ کرنے والے اداروں، تنصیبات اور شہریوں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔ بی این اے بلوچستان کی عسکریت پسندی میں ملوث ہونے کی وجہ سے بھی جانا جاتا ہے، جو صوبے اور اس کے عوام کے لیے زیادہ خود مختاری کا خواہاں ہے۔عسکریت پسندی کئی سالوں سے جاری ہے اور اس میں تشدد اور خونریزی ہوئی ہے۔ بلوچستان پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ ہے اور یہ تیل، گیس اور معدنیات جیسے قدرتی وسائل سے مالا مال ہے۔ تاہم، اپنی قدرتی دولت کے باوجود، صوبہ ملک کے غریب ترین علاقوں میں سے ایک ہے، جہاں بے روزگاری، غربت اور پسماندگی کی اعلی سطح ہے.بلوچ قوم پرست طویل عرصے سے صوبے کے وسائل پر زیادہ خود مختاری اور کنٹرول کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ تاہم، پاکستانی ریاست ملک کی علاقائی سالمیت اور قومی سلامتی کے بارے میں خدشات کا حوالہ دیتے ہوئے ان مطالبات کو قبول کرنے سے گریزاں رہی ہے۔بلوچستان کی عسکریت پسندی کو بہت سے عوامل نے ہوا دی ہے اور بیرونی عناصر، جیسے دشمن انٹیلی جنس ایجنسیوں نے بھی اس کا فائدہ اٹھایا ہے، جو پاکستان کو غیر مستحکم کرنا چاہتے ہیں اور اس کے قومی مفادات کو نقصان پہنچانا چاہتے ہیں۔امام کی گرفتاری بی این اے اور دیگر عسکریت پسند گروہوں کے لیے ایک بڑا دھچکا ہے، جو بلوچستان اور پاکستان کے دیگر حصوں کو غیر مستحکم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ یہ ملک سے دہشت گردی اور عسکریت پسندی کی لعنت کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے لئے پاکستانی سیکورٹی فورسز کی صلاحیتوں اور عزم کو بھی اجاگر کرتا ہے۔امام کی گرفتاری ایک محتاط منصوبہ بند اور محتاط طریقے سے انجام دیئے گئے آپریشن کا نتیجہ تھی ، جو کئی مہینوں پر محیط تھا اور مختلف جغرافیائی مقامات کا احاطہ کرتا تھا۔ یہ آپریشن ملک کی انٹیلی جنس ایجنسیوں اور قانون نافذ کرنے والے اداروں نے کیا، جنہوں نے اس کی کامیابی کو یقینی بنانے کے لئے قریبی تعاون سے کام کیا۔پاکستانی سکیورٹی فورسز حالیہ برسوں میں دہشت گردی اور عسکریت پسندی کے خلاف جنگ میں نمایاں پیش رفت کر رہی ہیں۔ سیکورٹی فورسز کی مربوط کوششوں اور ان میں خدمات انجام دینے والے گمنام ہیروز کی قربانیوں کی بدولت ملک میں دہشت گردی کے حملوں میں نمایاں کمی دیکھنے میں آئی ہے۔تاہم، ملک میں سلامتی کی صورتحال نازک ہے، اور دہشت گردی اور عسکریت پسندی کا خطرہ بدستور موجود ہے۔ امام جیسے اہم اہداف کا حصول ملک میں دیرپا امن و استحکام کی جانب ایک طویل اور کٹھن سفر میں صرف ایک قدم ہے۔پاکستانی سیکورٹی فورسز کو قبائلی علاقوں خاص طور پر شمالی وزیرستان سمیت ملک کے دیگر حصوں میں دہشت گردی اور عسکریت پسندی کی لعنت کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے لئے انتھک کام جاری رکھنا چاہئے۔ قومی سلامتی کمیٹی کا شمالی وزیرستان میں آپریشن کرنے کا حالیہ فیصلہ قابل ستائش ہے۔کسی بھی بڑے پیمانے پر آپریشن کے لیے ملک کی انٹیلی جنس اکٹھا کرنے کی صلاحیتوں کو مضبوط بنانا، انسداد دہشت گردی کی حکمت عملی میں اضافہ اور ملک کے قانون نافذ کرنے والے اداروں کو بہتر تربیت اور سازوسامان کی فراہمی کی ضرورت ہوتی ہے۔گلزار امام کی گرفتاری پاکستان کی سیکیورٹی فورسز کے لیے ایک اہم کامیابی ہے اور یہ دہشت گردی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے اور بلوچستان میں امن و استحکام برقرار رکھنے کے ملک کے عزم کو اجاگر کرتی ہے۔ یہ ضروری ہے کہ پاکستانی حکومت اور سیکورٹی فورسز دہشت گردی کی بنیادی وجوہات سے نمٹیں اور اس عالمی خطرے سے نمٹنے کے لئے اپنے علاقائی اور بین الاقوامی شراکت داروں کے ساتھ مل کر کام کریں۔دنیا دیکھ رہی ہے اور پاکستان کی جانب سے اعلیٰ اہداف حاصل کرنے میں کامیابی درست سمت میں ایک قدم ہے۔ اب وقت آ گیا ہے کہ بلوچستان کے اسٹیک ہولڈرز اپنی ذمہ داری پوری کریں اور صوبے میں استحکام کے لیے کام کریں۔

مصنف کے بارے میں
مضمون نگار لاہور سے تعلق رکھنے والے سماجی کارکن اور آزاد محقق ہیں جنہوں نے بی این یو لاہور سے ماس کمیونیکیشن میں ماسٹرز کی ڈگری حاصل کی ہے۔
رابطہ: aimankhan125612@gmail.com

GulzarImam

Balochistan

Pakistan

About The Author

You might be interested in

Post A Comment For The Creator: vicharkisoch

Your email address will not be published. Required fields are marked *